ماہ رمضان المبارک کے ساتویں دن کی دعااور دعائیہ فقرات کی مختصر تشریح

Wed, 05/23/2018 - 03:14

ماہ رمضان المبارک کے ساتویں دن کی دعا
اَللّهُمَّ اَعِنّي فيہ عَلى صِيامِہ وَقِيامِہ وَجَنِّبني فيہ مِن هَفَواتِہ وَاثامِہ وَارْزُقني فيہ ذِكْرَكَ بِدَوامِہ بِتَوْفيقِكَ يا هادِيَ المُضِّلينَ۔
ترجمہ : اے معبود! اس مہینے کے دوران اس کے روزے  رکھنےاور شب زندہ داری میں میری مدد فرما، اور مجھے اس مہینے کے گناہوں اور لغزشوں سے دور رکھ، اور اپنا ذکر اور اپنی یاد کی توفیق جاری رکھنے کی توفیق عطا فرما، اپنی توفیق کے واسطے اے گم گشتۂ راہ کی ہدایت کرنے والے۔

ماہ رمضان المبارک کے ساتویں دن کی دعااور دعائیہ فقرات کی مختصر تشریح

اہم نکات:اس دعا میں چند مسائل کی جانب اشارہ کیا گیا ہے(1)روزہ (2)نماز(3)گناہوں اور لغزشوں سے دوری(4)خدا کی مسلسل یاد اور اسکا ذکر۔
دعائیہ فقرات:
(1)
: اَللّهُمَّ اَعِنّي فيہ عَلى صِيامِہ: ایک خاص خصوصیت جو ایک روزہ دار کے روزہ میں ہے اور جو دوسری عبادتوں میں کم تر درجہ پر پائی جاتی وہ روزہ میں خلوص کا درجہ ہےکیونکہ روزہ میں دوسری عبادتوں کی بہ نسبت  خلوص کا درجہ اور پیمانہ زیادہ جلوہ گر نظر آتا ہے، اسکا سبب یہ ہے کہ روزہ ایک امر عدمی ہے یعنی اسمیں سلبیاتی امور زیادہ ہیں کیونکہ اسمیں انسان کچھ چیزوں کو ترک کرنے پر معمور کیا گیا ہے ؛ کھانا نہ کھائے پانی نہ پیئے۔۔۔چونکہ کسی چیز کو انجام نہ دینے کا مسئلہ روزہ میں محوریت کا حامل ہے اور یہ ایک امر عدمی ہےاس لئے ریا اور شرک کا جنبہ اسمیں بہت کم پایا جاتا ہے اسی لئے روزہ میں بذاتہ دوسری عبادتوں کی بہ نسبت زیادہ خلوص پایا جاتاہے۔
بقیہ دوسری عبادتوں میں شیطان کے دخل کا کھٹکا لگا ہے ممکن ہے کہ وہ گھس کر عبادت کی نیت اور قربت کو خراب کردے اور خلوص کے فی صد کو کم کردے؛ واحد عبادت روزہ ہے  جسمیں ایسا کوئی امکان نہیں ، حدیث قدسی میں وارد ہے الصوم لی وانا اجزی بہ ؛ روزہ میرے لئے ہے اور روزہ کا صلہ میں خود ہوں(یا میں خود روزہ کا صلہ عطا کرونگا) (من لا یحضرہ الفقیہ،2/75)۔۔۔۔ بہر طور روزہ ایک واجبِ دینی ہے اور تمام امتو ں میں اسکا ایک تاریخی سلسلہ ہےکیونکہ سابقہ امتوں پر بھی روزہ واجب تھا ۔۔۔روزہ رکھنا خدا کی ایک بہت بڑی توفیق ہے اسی لئے پروردگار سے اس توفیق کی دعا ہے اَللّهُمَّ اَعِنّي فيہ عَلى صِيامِہ۔۔۔ روزہ چونکہ قمری مہینہ کی بنیاد پر رکھا جاتا ہے اس لئے سال بھر کے مختلف موسموں میں گردش کرتا رہتا ہے ؛ کبھی گرمی میں تو کبھی سردی میں اور کبھی کسی اور موسم میں گرمیوں میں اسکے گھنٹے بھی زیادہ ہوجاتے ہیں اور انسان کو مزید گرمی برداشت کرنا پڑتی ہے لیکن بہر صورت بندہ کو اپنی بندگی انجام دینی ہی ہے۔

(2) اَللّهُمَّ اَعِنّي فيہ عَلى صِيامِہ وَقِيامِہ: اسکے بعد دوسری عبادات اور نماز کے مرحلہ کا ذکر ہے ؛ یہاں قیام سے مراد عبادت اور شب زندہ داری اور نماز ہے ، وہ نماز ،جو اہلبیت علیہم السلام سے مروی روایات کی بنیاد پر دین کی بنیاد اور ہر پرہیزگار انسان کے خدا سے نزدیک ہونے کاوسیلہ ہے، الصلاۃ قربان کل تقی (الکافی 3/265) بقیہ اعمال کی قبولی کی شرط نماز ہے ؛ آج کی زبان میں اگر کہا جائے تو نماز ایک ایسا کوڈ یا پاسورڈ ہے کہ جب تک اسے اپنے اعمال کے اندر نہ ڈالا جائے تب تک وہ عمل عبادت کہلائے گا ہی نہیں، جس طرح ہر شہر کا ایک الگ کوڈ ہوتا ہے کہ جب تک اسے نہ ڈائل کیا جائے تب تک اس شہر سے رابطہ نہیں ہوسکتا ،اعمال و عبادات کا بھی ایک کوڈ ہے جسکا نام نماز ہے،نماز کی اہمیت اس قدر زیادہ ہے کہ کسی بھی حالت میں نہیں چھوڑ سکتے چاہے ڈوب ہی کیوں نہ رہے ہوں یا بستر مرگ پر ہی کیوں نہ ہوں حتیٰ کہ مرنے کے بعد بھی اسکی قضا ادا کرنا واجب ہے۔۔۔

(3) وَجَنِّبني فيہ مِن هَفَواتِہ وَاثامِہ:اگر انسان اپنے گناہوں کی بھرپائی نہ کرے تو سرانجام سقوط اسکا مقدر ہوگا اور ایک برا انجام اسکی ٹُوہ میں ہمیشہ رہے گا اور آخر کار وہ اسمیں گرکرتباہ و برباد ہوجائے گا کیونکہ گنا ہ اپنے برے اثرات کا کنواں انسان کے پاؤں تلے مسلسل بناتا رہتا ہے؛ اس جملہ میں ظالم قوموں ستمگر حکمرانوں کے سقوط کا رمز و راز پوشیدہ ہےکہ جب قومیں بہک جاتی ہیں لیڈر گناہوں کے گرداب میں پھنس جاتے ہیں تو کیسے تباہی و بربادی تاریخ کے صفحات کو خونی بنا جاتی ہے۔
(4) وَارْزُقني فيہ ذِكْرَكَ بِدَوامِہ: یاد ہمیشہ سے ہی ایک بہت ہی اہم چیزوں میں شمار کی جاتی ہے اور خدا کے ذکر کی یاد صرف لقلقۂ زبان نہیں ہے اگرچہ کہ اذکار و اوراد کا دُہراتے رہنا بھی بہت اہم ہے لیکن بحث یہاں ہے کہ انسان کو کسی بھی حالت میں خدا کو فراموش نہیں کرنا چاہیئے؛ہمیشہ ہر حال میں خدا   کو اپنے اعمال پر شاہد و ناظر جاننا چاہیئےکیونکہ عالم محضر خدا ہے اور محضر خدا میں گناہ نہیں کرنا چاہیئے(صحیفۂ امام ج13ص461)امیر المؤمنیں علیہ السلام ارشاد فرماتے ہیں: الذکر لذۃ المحبین؛ذکر میں دوستدار خدا کے لئے کیف و مستی کا عالم ہے(عیون الحکم و المواعظ،ص32) وَ اُذْكُرِ اِسْمَ رَبِّكَ بُكْرَةً وَ أَصِيلاً  ﴿الإنسان25﴾اور صبح وشام اپنے پروردگار کا نام لیتے رہو  يٰا أَيُّهَا اَلَّذِينَ آمَنُوا اُذْكُرُوا اَللّٰهَ ذِكْراً كَثِيراً  ﴿الأحزاب‏، 41﴾اے اہل ایمان خدا کا بہت ذکر کیا کرو ۔
ایک باایمان انسان چاہے خفا ہو یا جلا پوشیدہ طور پہ ہو یا علانیہ ظاہر بہ ظاہر ہو یا کہیں اور، ہمیشہ خدا کی یاد اور اسکے ذکر کے ساتھ ہےکیونکہ کبھی ایک چھوٹی سی غلط رضایت بھی انسان کو جہنمی بناسکتی ہے؛ذکر خدا اور اسکے مسلسل ذکر سے مراد یہ ہے کہ کسی بھی جگہ اور کسی بھی وقت کو خدا کے حضور سے خالی نہ سمجھیں اور ہمیشہ اسے اپنا نگہبان اور ناظر جانیں امیر المؤمنیں علیہ السلام ارشاد فرماتے ہیں: من ذکر اللہ فی السر فقد ذکر اللہ کثیراً؛ جس نے خدا کو تنہائی میں یاد رکھا اس نے خدا کا خوب ذکر کیا(راوندی،ص20)

(5) بِتَوْفيقِكَ يا هادِيَ المُضِّلينَ:اس دعا میں ہم نے رب العزت سے روزہ کی انجامدہی ،شب زندہ داری ،عبادت ،لغزشوں اور  گناہوں سے دوری کی درخواست کی ہے لیکن یہ تمام چیزیں حاصل نہیں ہوسکتیں جب تک خدا کی نظر عنایت شامل حال نہ ہو اور اسکی توفیق ہمراہی نہ بنے؛یعنی خود خدا ہمیں اپنی راہ پر ڈال دے کہ ہم اس راہ پر قدم بڑھاتے ہوئے اسکی خاص عنایتوں سے بہرہ ور ہوتے رہیں ورنہ ہم کیا اور ہماری اوقات کیا کہ اس قدسی بارگاہ کا خواب دیکھیں جہاں معصومین علیہم السلام جیسی ذوات مقدسہ نے اپنے سروں کا نذرانہ پیش کردیا ہو،لیکن پھر بھی رب العزت کے علاوہ کون ہے جو ہمارے ہاتھوں کو تھامے اور ہم گم گشتۂ راہ ہدایت کو ہدایت کے راستہ پر باقی رکھے؟
بارگاہ احدیت میں دعا ہے کہ معبود ہم سب کو اعمال صالحہ بجا لانے کی توفیق عنایت فرما! آمین یا رب العالمین بحق محمد و آلہ الطاہرین۔
 

Add new comment

Plain text

  • No HTML tags allowed.
  • Web page addresses and e-mail addresses turn into links automatically.
  • Lines and paragraphs break automatically.
4 + 3 =
Solve this simple math problem and enter the result. E.g. for 1+3, enter 4.
www.welayatnet.com
Online: 16