امام حسن عليه السلام کے فضائل

Thu, 08/17/2017 - 21:46

انسان کی عظمت و برتري کو پہچاننے کا ایک طریقہ یہ بھی ہے کہ وہ اپنے سےبرتروصاحب فضيلت شخصیت کا محبوب ہو۔

امام حسن عليه السلام کے فضائل

بخاري  میں ابوبکر سے منقول ہے: رايت النبي صلي الله عليه و آله علي المنبر والحسن بن علي معه وهو يقبل علي الناس مرة و ينظر اليه مرة و يقول: ابني هذا سيد[الجامع الصحيح ج 3، ص 31] ؛ میں نے نبي اكرم صلی الله عليه و آله کو دیکھا کہ آپ منبر پر تشریف فرما تھے اور حسن بن علیؑ بھی آپکی آغوش میں تھے، آپ صلی الله عليه و آله  کبھی لوگوں کو دیکھتے تھے اور کبھی حسن کواور فرماتے تھے:  میرا یہ فرزند  سید و سردار ہے۔
سيوطي اپنی  تاريخ میں لکھتا ہے: كان الحسن رضي الله عنه له مناقب كثيرة، سيدا حليما، ذا سكينة و وقار و حشمة، جوادا، ممدوحا [تاريخ الخلفا، ص 189]؛ حسن [بن علي ؑ بہت سارے اخلاقي امتيازات اورانسانی فضائل  کے حامل تھے، وہ عظیم [شخصيت ] کے مالک تھے، بُردبار، با وقار، متين، سخی، اور ہر ایک کی تعریف کا مرکز تھے۔
اور بالکل درست بھی ہے کہ پيغمبر اكرم صلی الله عليه و آله کےسبط اكبر کو ایسا ہونا بھی چاہیئے، کیونکہ  متقين بہترین فضائل کے مالک ہوا کرتے ہیں، امام علي عليه السلام فرماتے ہیں: فالمتقون هم اهل الفضائل [نهج البلاغه، خطبه 193]؛ پرہیزگار، صاحب فضائل ہیں۔
حوالے:
محمد بن اسماعيل بخاري، الجامع الصحيح، (بيروت، دار احياء التراث العربي) ج 3، ص 31 .
سيوطي، تاريخ الخلفا، ( بغداد، مكتبة المثني، 1383 ه . ق) ص 189.
نهج البلاغه، خطبه 193، ص 402 .

Add new comment

Plain text

  • No HTML tags allowed.
  • Web page addresses and e-mail addresses turn into links automatically.
  • Lines and paragraphs break automatically.
2 + 8 =
Solve this simple math problem and enter the result. E.g. for 1+3, enter 4.
www.welayatnet.com
Online: 39