امان اہل زمین

Sun, 04/16/2017 - 11:17

چکیده:اپنے امام کو پہچانیں اور قدر کریں کہ جن کی وجہ سے اس کائنات کا نظام باقی ہے ۔اور بالخصوص ان کے ظھور کے لیے دعا کریں۔

امان اہل زمین

امان اہل زمین

إنّی أمانٌ لأِهلِ الأرضِ کَما أنَّ النُّجُومَ أمانٌ لأِهلِ السَّماءِ ۔[1]
میں امان  ہوں اہل زمین کے لیے جیسے کہ ستارے امان ہیں اہل آسمان کے لیے ۔

امام زمان علیہ السلام اسحاق بن یعقوب کو ایک خط میں اس نکتہ کی طرف اشارہ فرماتے ہیں کہ غیبت امام، بے فائدہ نہیں ہے، امام کے فوائد میں سے ایک یہ ہے کہ امام، امان کے لئے ہوتا ہے اہل زمین کے لیے جیسے ستارے امان کا سبب ہیں اہل آسمان کے لیے ۔ اس کے علاوہ بھی اسی مضمون میں اور بھی روایات نقل ہوئی ہیں مثال کے طور پر :
1:قال رسول الله (صلی الله علیه و آله و سلم): النُّجُوم اُمانٌ لِاَهلِ السَّماء و اَهلُ بَیتی اَمانٌ لِاُمَّتی۔[2]
ستارے امان ہیں اہل آسمان کے لیے اور اسی طرح میرے اہل بیت امان ہیں میری امت کے لیے ۔
2: اگر حجت خدا زمین پر نہ ہو تو زمین اور اہل زمین تباہ ہو جائیں۔
3: قال رسول الله(صلی الله علیه و آله و سلم) : النُّجُوم اُمانٌ لِاَهل السَّماء و اَهلُ بَیتی اَمانٌ لِاُمَّتی، فَاذِا ذهب النجوم ذَهَبَ اَهلُ السَّماء و اذا ذَهَبَ اهل بَیتی ذَهَبَ اَهلُ الارض۔[3]
ستارے امان ہیں اہل آسمان کے لیے اور اسی طرح میرے اہل بیت امان ہیں میری امت کے لیے  پس جب ستارے نہ رہیں گے تو اہل آسمان بھی نہ رہیں گے اور اہل بیت اگر زمین پر نہیں رہیں گے تو اہل زمین بھی نہ رہیں گے(یعنی قیامت آ جائے گی)۔
4: وَ ما کانَ اللَّهُ لِيُعَذِّبَهُمْ وَ أَنْتَ فيهِمْ ۔[4]
خداوند عالم اس وقت تک  ان پر عذاب نہیں ڈھائے گا جب تک تم ان کے درمیان میں ہو ۔
5:قال امام زمان علیہ السلام: أنا خاتمُ الاَوصیاءِ و بِی یَدفَعُ اللهُ عَزَّ وَ جَلَّ البَلاءَ عَن اَهلی وَ شِیعَتی ۔[5]
میں آخری وصی ہوں، میری خاطر خدا بلاؤں کو میرے خاندان اور شیعوں سے دور کرتا ہے۔
امام زمان علیہ السلام کا وجود اہل زمین کے لیے امان کا باعث ہے،اس وجود کو تشبیہ دی گئی ہے ستاروں سے کہ جو باعث امان ہیں اہل آسمان کے لیے، یعنی :
الف:ستاروں کا وجود آسمان پر امان کا سبب ہے ،اسی طرح امام زمان علیہ السلام کا وجود زمین کی موجودات کے لیے ایسے ہی ہے۔
ب:ستاروں کے وجود کے سبب، آسمان شیاطین سے محفوظ رہتا ہے اسی طرح اہل زمین بھی شیاطین سے محفوظ رہ سکتے ہیں ۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

منابع

[1] بحار الأنوار ، ج 78 ، ص 380
[2]المستدرك على الصحيحين ج3 ص149، ورواه الحضرمي في وسيلة المآل ص113، والذهبي في تلخيص المستدرك، والسخاوي في استجلاب ارتقاء الغرف ص80 مخطوط.
[3]فضائل الصحابة لابن حنبل : 2 / 671 / 1145 ، الفردوس : 4 / 311 / 6913 ، ينابيع المودّة : 1 / 71 / 1 كلّها عن الإمام عليّ عليه‏السلام ، أمالي الطوسيّ : 379 / 812 ، جامع الأحاديث للقمّيّ : 259 كلاهما عن ابن عبّاس وفيهما «لاُمّتي» بدل «لأهل الأرض
[4] سوره : الانفال آیه : 33
[5] دعوات راوندی: ص 207، ح 563. 

تبصرے

Submitted by Akram on

Maashaallah

Add new comment

Plain text

  • No HTML tags allowed.
  • Web page addresses and e-mail addresses turn into links automatically.
  • Lines and paragraphs break automatically.
1 + 16 =
Solve this simple math problem and enter the result. E.g. for 1+3, enter 4.
www.welayatnet.com
Online: 34